ایران جانیوالے زائرین کو اضافی سامان لیجانے کی اجازت نہیں ہوگی

رپورٹ۔۔۔فاروق رند
پاک ایران سرحدی حکام کازائرین کے مسائل کے حوالے سے اجلاس، پاکستانی وفد کی سربراہی ڈپٹی کمشنر چاغی فتح خان خجک نے کی

اجلاس ایران کے سر حدی شہر میر جاوا میں منعقد ہوا۔

اجلاس میں پاکستان کے راستے سے ایران جانے والے زائرین کی بہترسہولیات کی فراہمی کیلئے اقدامات پر غور کیا گیا

اجلاس میں ایرانی وفد کی نمائندگی کرنل شہرم خسرو مینش کررہے تھے اجلاس میں دونوں اطراف کے سرحدی حکام کے آفیسران بھی شریک تھے اجلاس میں زائرین کی بہتر سہولت کیلئے متعدد فیصلے کیے گئے

زائرین کیلئے مزید 22ایمگریشن کاونٹرز کا قیام زائرین کی آمد پر 24گھنٹے کاونٹرز فعال رکھنے کا فیصلہ کیا گیا تاکہ زائرین کی بھر وقت ایمگریشن مکمل ہو اوردونوں اطراف سے تین فوکل پرسن مقرر کیے جائینگے۔

جس میں کسٹم،ایمگریشن،اور انتظامیہ کے آفیسر شامل ہونگے تاکہ ہر وقت ایک دوسرے کے ساتھ رابطے میں رہیں

نقل و حرکت کے دوران زائرین کو بہترین سیکورٹی کی فراہمی اور زائر ین کو اضافی سامان اٹھانے کی اجازت نہیں ہوگی،صرف وہ اپنی ضرورت کا سامان اٹھا سکتے ہیں

زائرین کی بسوں کی حالت کو بہتر بنانے اور ایرانی گریڈ ون اور تفتان اسسٹنٹ کمشنر کے مابین ہر وقت رابطہ میں رہنے پر بھی اتفاق کیا گیا۔

اجلاس میں ڈپٹی کمشنر چاغی فتح خان خجک کے ہمراہ اے ڈی سی بادل دشتی ودیگر آفیسران بھی شریک تھے اجلاس میں پاک ایران سر حدی امور کے دیگر معا ملات بھی زیر غور آئے

یاد رہے اس سے قبل گزشتہ ہفتے پاکستان کے سر حدی شہر تفتان میں ایرانی اور پاکستان حکام کے درمیان زائرین کے متعلق اجلاس منعقد ہوا پاکستان کی جانب سے اجلاس کی نمائندگی اسسٹنٹ کمشنر دالبندین نے کی تھی

اپنا تبصرہ بھیجیں