عزتوں کا سودا نہیں کرسکتے ۔۔۔۔۔۔

0
(افسانہ ۔۔۔۔۔۔۔ باقی بلوچ ۔۔۔۔۔)
شہداد اپنے باپ کا چھوٹا بیٹا تھا۔۔۔۔۔۔۔ مضبوط جسم ۔۔۔۔۔چھ فٹ لمبے  قدوقامت جسم کا مالک ۔۔۔۔۔۔ کالے موٹی مونچھوں کے ساتھ ایک خوبصورت نوجوان ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکا خیال تھا کہ زندگی ایک بوجھ ہے ۔۔۔۔۔۔ دنیا میں زندہ رہنا آسان کام نہیں ۔۔۔۔۔۔۔گھر میں گم سم بیٹا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنا صندوق نکالا ۔۔۔۔۔۔۔ چابی لگا کر کھول دیا  ۔۔۔۔۔۔۔۔ صندوق میں اسکے بچپن کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جوانی کی خاص خاص چیزیں پڑی تھیں ۔۔۔۔۔۔خنجر اُٹھایا ۔۔۔۔۔۔ تیل لگا کر رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ جو اسکے باپ نے سنبھال کر رکھنے کی وصیت کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اپنا پسٹل اُٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔ پھر رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اسکے دل میں آج کئی وسوسے پیدا ہورہے تھے ۔۔۔۔۔۔ اس نے سوچا کہ ہتھیار بھی بغیر استعمال کے زنگ آلود ہوجاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اگر ہتھیاروں سے کام نہ لیا جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بالکل انسان بھی لوہے کی طرح ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر کام نہ کرے ۔۔۔۔۔۔۔گھر میں پڑا رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔کھاتے پیتے رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔تو  صلاحیتیں بھی زنگ آلود ہوجاتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔خدا جانے آج شہداد کو کیا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ خنجر اٹھا کر صاف کرکے  رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پسٹل بھی اٹھا کر گھماکر ۔۔۔۔۔۔۔ گھوڑی پر ہاتھ رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے صندوق کی پرانی چیزوں کو ٹٹولا۔۔۔۔۔۔۔۔ دل گرفتہ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بے زاری کے عالم میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنا سر پکڑ کر ۔۔۔۔۔۔۔ ایک لمبی سانس لیکر ۔۔۔۔۔۔۔بےروزگاری کا شکوہ  کیا ۔۔۔۔۔.  ذمہ دار بھی خود کو ٹھہرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔ آسمان پر ہلکے ہلکے بادل نظر آریے تھے ۔۔۔۔۔۔۔کبھی سایہ ۔۔۔۔۔۔ کبھی دھوپ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچانک پرندوں کا ایک غول گزرگیا ۔۔۔۔۔۔۔ انکو شکار کا خیال آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر ایک دم خیالات بدل گئے ۔۔۔۔۔۔۔بولا بیچارے پرندوں کا کیا قصور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔انکی  چھوٹی سی خوبصورت  زندگی ہے ۔۔۔۔ فطرت کا حسن ہے ۔۔۔۔۔۔۔ خوشی سے ۔۔۔۔آرام سے ۔۔۔۔۔۔ چہچہاتے گاتے جیتے جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
اس نے  صندوق میں ساراسامان واپس رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔اور تالا لگا دیا۔۔۔۔۔۔۔

 

دل گرفتہ ۔۔۔۔۔۔۔ بوجھل قدموں کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔گھر سے نکل گیا ۔۔۔۔۔۔۔گلی سے ہوتے ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔لوگوں کی طرف دیکھا بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ اس کو لگا یہ ساری چلتی پھرتی لاشے ہیں  ۔۔۔۔۔۔۔سب اپنے اپنے چکر میں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔آج وہ بہت مایوس تھا۔۔۔۔۔۔۔۔آخر کار وہاں پہنچا ۔۔۔۔۔ جہاں ہر وقت اس کے یاروں دوستوں کا ٹھکانہ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔شہداد آج غموں میں ڈوبا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاتھ ماتھے پر لگا کہ بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔اس کا جگری دوست ۔۔۔۔۔۔قادر بھی ٹھکانے پر پہنچا ۔۔۔۔۔۔۔۔سلام کیا  ۔۔۔۔۔۔۔شہداد نے سلام کا کوئی جواب نہیں دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔قادر پھر بولا۔۔۔۔۔ السلام علیکم ۔۔۔۔۔۔۔دوسری مرتبہ بھی  جواب نہیں ملا ۔۔۔۔۔۔۔۔تیسرا مرتبہ سلام کیا ذرا زور سے  ۔۔۔۔۔ پھر بھی خاموشی ۔۔۔۔۔۔۔ قادر کو غصہ آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔بولا شہداد اور جھٹکہ دے کر دونوں ہاتھوں سے زور سے ہلایا ۔۔۔۔۔۔بولا یار ناراض ہوکیا ۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے آپکو ۔۔۔۔۔کسی نے کچھ کہا ہے آپ کو ۔۔۔۔۔۔۔کہو کیا معاملہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔
شہداد نے۔۔۔۔۔ ایک لمبا سانس لیکر کہا ۔۔۔۔۔۔۔چھوڑو یار ۔۔۔۔۔۔۔یہ بھی کوئی ذندگی ہے ۔۔۔۔۔۔۔جوانی کے دن یہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔نہ کوئی روزگار یے ۔۔۔۔۔ نہ کوئی کام دھندہ ۔۔۔۔۔۔۔اس سے بہتر ہے موت آجائے ۔۔۔۔۔۔۔۔قادر نے اسے  دلاسہ دیا ۔۔۔۔۔۔۔ اور کندھے پر تھپکی دے کر کہا ۔۔۔۔۔۔ فکر نہیں کرو یار شہداد ۔۔۔۔۔۔ اللہ سب کچھ بہتر کرے گا ۔۔۔۔۔۔۔کچھ نہ کچھ کرلینگے ۔۔۔۔۔۔۔کب تک یوں ہی ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیھٹے رہینگے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن آج شہداد کا ارادہ کچھ اور تھا ۔۔۔۔۔۔۔وہ کچھ اور کرنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔وہ سارے راستے آزما چکاتھا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔در در کی ٹوکریں کھائے ۔۔۔۔۔۔۔ گھر گھر دستک دیا  ۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن مایوسی بد قسمتی  مقدرمیں رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔قادر نے یکا یک بولا۔۔۔۔۔۔۔۔ کہو کیا کرنا ہے ۔۔۔۔۔۔ وہ جزبات میں اُٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔ شہداد نے اسکا ہاتھ پکڑا ۔۔۔۔۔ ساتھ بٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔ بولا احمق ۔۔۔۔۔ اتنے جلدی غصے میں آتے ہو ۔۔۔۔۔۔۔ غصہ ٹھیک نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ اس غصے نے اچھے اچھوں کو برباد کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ غصے میں انسان غلط فیصلے  کرتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر سوائے مایوسی کے انکو کچھ نہیں ملتا ۔۔۔۔۔۔۔ شہداد نے قادر کا ہاتھ پکڑا ۔۔۔۔۔۔۔ اس نے  انگلیوں پر گننا شروع کیا ۔۔۔۔۔۔ ایک۔۔۔ دو۔۔۔۔۔ تین۔۔۔۔ قادر بولا کیا مطلب ۔۔۔۔۔۔ شہداد نے کہا آج سے کام شروع۔۔۔۔۔۔ اور زور دار قہقہہ لگایا۔۔۔۔۔۔ قادر نے حیرانی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔ آخر کونسا کام ۔۔۔۔۔۔.  کونسی دھندا۔۔۔۔۔۔ شہداد نے دھیمی آواز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔ چوری ۔۔۔۔ چوری ۔۔۔۔۔ قادر کا دم گھٹ گیا۔۔۔۔۔۔اور پسینے نکل آئے ۔۔۔۔۔۔۔۔ شہداد نے بولا ۔۔۔۔۔.  آہستہ ۔۔۔۔۔ آہستہ ۔۔۔۔۔ دیواروں کے بھی کان ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ خبردار۔۔۔۔۔ ہوشیار۔۔۔۔۔۔۔
قادر یہ سن کر سر پٹخ کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔اپنے ہوش وحواس میں نہیں رہا۔۔۔۔۔۔ کچھ وقفے کے بعد بولا۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ۔۔۔۔یہ۔۔۔۔۔۔ کام کیسے ہوپائے گا۔۔۔۔۔۔.  اور میں تو اس کام کو گناہ سمجھتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔میں تو اس کام کیلئے کسی بھی قیمت پر بھی تیار نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔شہداد بولا۔۔۔۔۔۔۔ سنو قادر بے وقوف مت بنو۔۔۔۔۔۔۔ نیک نام یا بد نام ۔۔۔۔۔۔۔؟ ۔۔قادر گبھراہٹ کے عالم میں بولا۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا مطلب ۔۔۔۔۔۔ شہداد نے کہا دیکھو۔۔۔۔۔۔۔ یہی وجہ ہے کہ ہمارے جیب میں ایک روپیہ تک نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ دنیا میں کچھ کرنا پڑھے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جب ہیسے آئینگے۔۔۔۔۔۔ تو ذندگی کی موج مستی بھی لوٹ آئیگی ۔۔۔۔۔۔۔ اور ذندگی بھی مزے سے گذرجائیگی۔۔۔۔۔۔۔۔ لوگوں میں عزت وقار بلند ہوگا۔۔۔۔۔۔۔ عزت پیسے میں یے۔۔۔۔۔۔۔ شریف ہونا ایک جرم ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ شریف لوگ اپنے موت آپ مرجاتے ییں ۔۔۔۔۔۔۔ ایسے لگا جیسے قادر جرم کرنے پر آمادہ ہوگیا۔۔۔۔۔۔۔۔ سر جھکا کر سوچ وبچار میں مصروف رہا۔۔۔۔۔۔
موسم بہار اپنی عروج پر تھا۔۔۔۔۔۔۔ درختوں سے پتے نکلنا شروع ہوگئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔ اچھی خوشگوار ہوا چل رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ آہستہ ۔۔۔۔۔ آہستہ ۔۔۔۔۔ سورج پہاڑوں کے اُس پار اوجھل ہورہا تھا  ۔۔۔۔۔ پہاڑ سے سورج کی نظروں سے اوجھل ہونا خوبصورت منظر پیش کررہا تھا۔۔۔۔۔۔ شہداد نے اپنے  جگری دوست قادر کو اپنے ساتھ ملانے کی سر توڑ کوشش کر رہا تھا ۔۔۔۔۔ یکا یک مسجد سے مغرب کی آزان بلند ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔

 

دونوں دوست ایک دوسرے کو الوداع کہہ کر اپنےاپنے گھروں کو چلے گئے ۔۔۔۔۔۔شہداد کے مزاج اور طبیعت میں کافی تبدیلی آگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔پہلے وہ گھر میں چڑ چڑاپن اور غصےسے گھر والوں کے ساتھ بات کیا کرتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔لیکن اب گھر میں داخل ہوکر کسی سے بات نہیں کیا کرتا تھا۔۔۔۔۔۔۔پُر سکون اور خاموش رہتا تھا۔۔۔۔۔۔۔گھر والوں نے بھی شہداد کی طبیعت اور مزاج کو بھانپ لیا تھا ۔۔۔۔۔۔وہ لوگ بھی تجسس میں مبتلا تھے ۔۔۔۔۔۔کہ شہداد کو آخر ہوا کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کچھ دنوں سے وہ خاموش خاموش ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔گھر والے ایک دوسرے کے ساتھ کھسر پھسر کررہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔کہ کچھ تو ہے جس کی پردہ داری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔؟
اس اثنا میں تین چار دن گذرگئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔شہداد اپنے دوست قادر سے گاوں کی مسجد
والے کونے میں ملا۔۔۔۔۔۔۔ایک دوسرے کو حال احوال کے بعد قادر ذہنی طور پر شہداد سے زیادہ تیار ہوچکا تھا۔۔۔۔۔۔اچانک قادرنے  شہداد سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔تو اچھا دوست وہ کام کی کب شروعات کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔شہداد حیران ہوکر بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔کونسا کام۔۔۔۔۔۔۔۔قادر نے کہا چوری۔۔۔۔۔۔۔۔شہداد نے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں یار اور ہنستے قہقہہ لگاتے ہوئے۔۔۔۔۔۔۔ایک دوسر ے کے ہاتھ کے ہاتھ پر زور سے تالی بجائے۔۔۔۔۔۔۔۔شہداد نے کہا آجاو یار۔۔۔۔۔۔ بیٹھ کر مشورہ کریں۔۔۔۔۔۔۔۔وہ مسجد کے دیوار پرٹیک لگا کر بیٹھ گئے۔۔۔۔۔۔۔۔اور شہداد بولا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اے اللہ تو ہمارے مدد کرنا۔۔۔۔۔۔۔ قادر بولا ۔۔۔۔آمین۔۔۔۔۔۔
شہداد کے گاوں سے ایک دوسرا گاوں دو کلومیٹر کے فاصلے ہرتھا۔۔۔۔۔۔۔۔جس میں  اللہ داد نامی ایک سیٹھ رہتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کے ہاس دولت کی کوئی کمی نہ تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اونچی حویلی ۔۔۔۔۔۔ کشادہ صحن۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بڑا اور خوبصورت گھر۔۔۔۔۔۔۔۔ درختوں اور پھولوں کا خوبصورت نظارہ ۔۔۔۔۔۔۔اللہ داد دل کھول کر غریبوں کی مدد کرتا تھا۔۔۔۔۔۔۔ وہ فیاضی اور ذکوة دینے میں مشہور تھا۔۔۔۔۔۔ خاص کر رمضان اور عید کے موقع پر وہ علاقے کے یتیم ،  بیوہ اور غریبوں کی ہر طرح سے مدد کرتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسری طرف شہداد قادر۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ داد  ڈاکہ ڈالنے کیلئے تیار تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچانک اللہ داد کو ضروری کام پڑھ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔ اسے شہر جانا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس نے اپنے بیوی کو کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہوسکتا ہے کہ آج میں گھر نہ آسکوں۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن۔۔۔۔۔ لیکن ۔۔۔۔۔۔۔ گاوں میں کسی کو پتہ نہ چلے کہ میں شہر جارہا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔ لوگوں کو کیا پتہ انکا خیال ہے کہ میں گھر میں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاں سنو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اگر بالفرض اگر کوئی میرا ہوچھے تو انکو کہو میں گاوں میں ہی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں اور رات کو گیٹ اور دروازہ بند کرکے سوجانا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شہداد اور قادر بھر ہور تیاری میں تھے۔۔۔۔۔۔۔۔اپنا بھیس بدلنے کا بھی بندوبست کرٓلیا ۔۔۔۔۔۔۔ اپنے پاوں پر کپڑے باندھ دیے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تاکہ اگر دیوار پھلانگ کر نیچے اتر جائے تو پاوں بالکل بھی آواز نہ کریں۔۔۔۔۔۔۔۔تاکہ آسانی سے اپنا کام کرکے جلدی سے نکل جائیں۔۔۔۔۔۔۔صرف دونوں کی آنکھیں دکھائی دی رہی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔شہداد نے پسٹل اور باپ کا دیا ہوا  خنجر بھی اُٹھا رکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ دونوں اللہ داد کے گھر کوئی رات کے تین بجے کے ٹائم آگئے۔۔۔۔۔۔۔ شہداد ایک ہوشیار آدمی تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ اس نے گھر میں آتے ہی پہلا کام یہ کیا کہ گھر کی بجلی کاٹ دی۔۔۔۔۔۔۔ تاکہ انہیں کوئی نہ دیکھ سکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دونوں آہستہ آہستہ گھر میں داخل ہوگئے۔۔۔۔۔۔۔ اور دروازہ کھٹکٹایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ داد کی بیوی کی آنکھ کھل گئی۔۔۔۔۔۔۔ کانپ اُٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔ بولی کون ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس دوارن شہدا پیچھے جاکر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دروازے کو زوردار لات مار کر توڑ دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور دونوں گھر میں داخل ہوگئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ داد کی بیوی اپنی ایک معصوم بچی کے ساتھ کمرے میں سوئی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ چیخ کر بولی ۔۔۔۔۔۔ چور چور ۔۔۔۔۔۔۔  شہداد نے ٹارچ کی لائیٹ آن کرکے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
ایک ۔۔۔۔ ایک۔۔۔ بھی بات کی ۔۔۔۔۔ تو شوٹ کردونگا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ داد کی بیوی ڈر گئی اور آواز دب گئی۔۔۔۔۔۔ قادر رعب دار آواز میں کہا چابی دیدے۔۔۔۔۔۔ ہاں۔۔۔۔۔ اور پیسے کہا رکھے یوئے ییں۔۔۔۔۔۔۔ اللہ داد کی بیوی ان پر چابی پھینک دی ۔۔۔۔۔ اور سب کچھ صاف بتا دیا ۔۔۔۔۔۔۔
قادر تسلی سے تمام سونے اور پیسے ایک رومال پر ڈال کر باندھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔اور شہداد پسٹل تھام کر الرٹ کھڑا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ داد کی بیوی خوبرو اور حسین تھی ۔۔۔۔۔۔۔  اچانک قادر کی نیت خراب ہوگئی۔۔۔۔۔۔ اس کے شہوانی جذبات ابھر کر سامنے آگئے ۔۔۔۔۔۔ وہ اللہ داد کی بیوی کی عزت لوٹنے کی غرض سے آگے بڑھا۔۔۔۔۔۔۔ لیکن شہداد نے قادر کو روکا منع کیا ۔۔۔۔۔۔۔ دو مرتبہ بولا ۔۔۔۔۔۔ لیکن قادر باز نہیں آیا  ۔۔۔۔۔۔۔ جب قادر نے اللہ داد کی بیوی کا ہاتھ پکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔ تو شہداد نے گولی مار کر قادر کی ذندگی کا خاتمہ کردیا ۔۔۔۔۔۔۔ اور شہداد سونے اور پیسے بھی نہیں اُٹھائے اور نکل گیا ۔۔۔۔۔۔ کل صبح پورے علاقے میں ڈنڈورا پیٹ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ اللہ داد کے گھر چور ی ہوئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ لوگ نہ جانے کیا سے کیا کہہ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔ جتنی منہ اتنی باتیں ۔۔۔۔۔۔۔ قادر کو پہچان کر لاش انکے گاوں بیجھ  دیا گیا  ۔۔۔۔۔۔۔ اور گاوں کے بڑوں سے اصل چور کی حوالگی کا بھی مطالبہ کیا گیا ۔۔۔۔۔۔۔
گاوں میں سب کو پتہ تھا ۔۔۔۔۔ کہ قادر کا جگری دوست شہداد ہے ۔۔۔۔۔۔۔ آخر کار شہداد کو پکڑا گیا۔۔۔۔۔۔ گاوں کے بڑے لوگ جمع ہوگئے ۔۔۔۔۔ میدان سج گیا ۔۔۔۔۔۔.  شہداد کو پیش کیا گیا ۔۔۔۔۔۔۔ اللہ داد اور اس کی بیوی بھی آگئے ۔۔۔۔۔اللہ داد کی بیوی سے پوچھ گچھ شروع ہوئی ۔۔۔۔۔۔ بولی جب یہ لوگ ہمارے گھر میں داخل ہوگئے ۔۔۔۔۔۔
مجھ سے پہلے پہل چابی مانگی ۔۔۔۔۔۔ میں نے ڈر کیوجہ سے جابی دیدی ۔۔۔۔۔۔سونے چاندی پیسے سب اُٹھالیے ۔۔۔۔۔۔ لیکن اس کے دوست نے میری عزت لوٹنے کی کوشش کیں۔۔۔۔۔ اور اسے اس کے  دوست نے  منع کیا ۔۔۔۔۔ کہ بھائی ہم گھر لوٹ ریے ہیں ۔۔۔۔۔ لیکن خواتین کی عزت لوٹنے کا ہمیں کوئی حق حاصل نہیں ۔۔۔۔۔ لیکن وہ نہیں مانا۔۔۔۔۔۔ تو اس نے بجائے چوری کرنے کے اپنے  دوست کوگولی مار کر ہلاک کردیا۔۔۔۔۔۔۔ گاوں کے بڑوں نے اللہ داد سے پوچھا۔۔۔۔۔ آپ کیا کہنا چاہتے ہو ۔۔۔۔۔۔ اللہ داد بولا ۔۔۔۔ جس نے میری بیوی کی عزت بچائی ۔۔۔۔۔ ہمارے پورے علاقے کو روایت زندہ کیا۔۔۔۔۔ عزت سے بڑھ کر کوئی چیز نہیں ۔۔۔۔۔۔ اسی وجہ سے میں شہداد کو معاف کرتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ ان کیلئے اپنی طرف سے انعام کا بھی اعلان کرتا ہوں ۔۔۔۔۔ گاوں کے بڑوں نے فیصلہ قبول کیا۔۔۔۔۔۔ شہداد کا سر جھکا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔ شرمندہ تھا۔۔۔۔۔۔ اس نے پیسہ انعام سب کچھ اُٹھانے سے انکار کریا۔۔۔۔۔۔ بولا۔۔۔۔۔۔ روایتوں کو زندہ رکھنا قوموں کی نشانی ہے ۔۔۔۔۔۔ سب کچھ لٹا سکتے ہیں ۔۔۔۔۔ حتی کی دوستوں کی بھی قربانی دے سکتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ لیکن ۔۔۔۔۔ لیکن عزتوں کا سودا نہیں کرسکتے۔۔۔۔۔۔۔
You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: