بلوچستان اور گوادر کو دو حصوں میں تقسیم کرنے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔ ایڈووکیٹ سعید فیض کی پریس کانفرنس

0

*گوادر (بیورو رپورٹ) گوادر میں باڑ لگانے کے عمل کو فوری طور پر روکا جائے۔ بلوچستان اور گوادر کو دو حصوں میں تقسیم کرنے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار بی این پی عوامی کے مرکزی سیکریٹری جنرل ایڈووکیٹ سعید فیض نے پریس کلب گوادر میں پارٹی رہنماؤں اور کارکنوں کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کے دوران کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم مقتدرہ اعلی تک یہ پیغام پہنچانا چاہتے ہیں کہ بلوچستان کے اندر جو* *سامراجی پالیسیاں ہیں ہم ان تمام پالیسیوں کو پہلے بھی مسترد کرچکے ہیں اور آج بھی نوآبادیاتی طرز حکمرانی کی مخالفت کے لئے تیار ہیں

کیونکہ ہم نے اپنی سرزمین کی بقا اور بلوچ قوم کی سالمیت کے ساتھ جینا ہے۔ انہوں نے کہا کہ گوادر کو عالمی منڈی میں فروخت کرنے اور مقامی آبادی کو یہاں سے بے دخل کرنے کے لئے اسلام آباد کے حکمرانوں کی طرف سے نت نئے ہتھکنڈے اور سازشیں کی جارہی ہیں جن سے ہم بخوبی آگاہ ہیں گوادر باڑ منصوبہ اسی سلسلے کی کڑی ہے جسے ہم یہاں کی مقامی آبادی کا معاشی سمیت عوام کی آئینی حقوق، حق آسائش اور ان کی آزادانہ نقل و حمل پر قدغن سمجھتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ویسے بلوچستان میں کئی دفعہ فوج کشی کی گئی مگر اس وقت صوبے بھر میں اغواء نما گرفتاریاں جاری ہیں اس بیچ جب لوگ اپنے پیاروں کی بازیابی کے لئے سراپا احتجاج ہیں تو لوگوں کو آئینی اور پرامن جمہوری احتجاج سے روکنے کے لئے ان کو کسی باڑ یا دیوار اور خاردار کے اندر محصور بناکر ان سے احتجاج کا حق بھی چھینا چاہتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں
1 of 8,746

انہوں نے کہا کہ گوادر میں باڑ لگانے کے عمل کو ہم گہری سازش سمجھتے ہیں جس کے پس پردہ مقاصد گوادر کو مکران اور بلوچستان سے علیٰحدہ کرنا ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے تین سو اضلاع ہیں صرف گوادر میں کیوں باڑ لگانے کی ضرورت پیش آئی ہے۔

کیا گوادر شہر کو تینوں اطراف سے بند کرکے اسے مہاجرین کی پناہ گاہ بنایا جائے گا۔ کیا تمام شاہراہیں بند کرکے مقامی*لوگوں ایک ہی انٹرنس کے اندر لائن پر لگایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہم پہلے سے سیکورٹی حصار میں ہیں گوادر شہر کے چھپے چھپے پر سیکورٹی چیک پوسٹ لگے ہوئے ہیں جہاں پر ہر راہ گیر اور مسافروں کو تنگ کیا جاتا ہے بادی النظر میں گوادر باڑ آزادانہ تجارت کی پالیسی نہیں بل کہ عسکری پالیسی کا آئینہ دار ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس سے قبل بھی گوادر میں باڑ لگانے کا کام شروع ہوا تھا مگر عوامی سطح پر اس کی بھرپور مخالفت کی گئی اور ھائی کورٹ بلوچستان نے عوامی مدعا سن کر مثبت فیصلہ دیا لیکن اس کے باوجود پھر عوام کے جذبات سے کھیلا جارہا ہے جو قابل مذمت ہے۔ انہوں نے کہا کہ گوادر باڑ کا منصوبہ ہو یا جنوبی بلوچستان کا نعرہ یہ نوآبادیاتی پالیسیوں کا تسلسل ہے جس طرح برطانوی سامراج نے ھندوستان کو اپنی کالونی بناکر اس کے وسائل لوٹے ایسا سلوک بلوچستان کے ساتھ بھی کیا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بلوچ اس کے خلاف مزاحمت کرے گی اور ضرور کرے گی ہم بلوچستان اور گوادر کو دو حصوں میں تقسیم کرنے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں عوام سے اپیل ہے کہ وہ متحد ہوکر اس منصوبے کو مسترد کریں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ گوادر میں باڑ لگانے کا عمل فوری طور پر روکا جائے۔*

You might also like
Leave A Reply

Your email address will not be published.