بلوچستان:وائرس کی گردش پولیو کے خاتمے میں رکاوٹ

رپورٹ۔۔۔عبدالکریم

بلوچستان کے ضلع جعفرآباد میں پولیو سے ایک اور بچہ متاثر ہوا ہے جس کے بعد بلوچستان میں رواں سال میں پولیو سے متاثرہ بچوں کی تعداد چھ ہوگئی

پورے پاکستان میں پولیو سے متاثرہ بچوں کی تعداد پینسٹھ تک جا پہنچی

جعفر آباد کے پولیو سے متاثرہ بچے کے والدین کا کہنا ہے کہ بچے کو رات کو تیز بخار ہوا جس کے بعد صبح بچے کے دونوں پیر مفلوج ہوگئے بچے کی عمر پندرہ ماہ بتائی جاتی ہے

یاد رہے بلوچستان میں تین بچے قلعہ عبداللّٰہ دو جعفرآباد اور ایک بچہ کوئٹہ کا پولیو سے رواں سال رپورٹ ہوا ہے،

اس بارے میں بلوچستان 24 ڈاٹ کام نے عالمی ادارہ صحت کے بلوچستان میں نمائندہ ڈاکٹر آفتاب کاکڑ سے بات کی ان کا کہنا تھا پولیو سے بچوں کا متاثر ہونے کی سب سے بڑی وجہ پولیووائرس کی گردش ہے

یہ وائرس جو کے انسان کے انتڑیو میں موجود ہوتی ہے وائرس کے گردش کا سبب بھی انسان ہی ہیں اس گردش کی وجہ سے جو انکاری بچے ہیں وہ متاثر ہورہے جتنے بھی بچے متاثر ہوئے ہیں یہ وہ بچے ہیں جن کے والدین نے بچوں کو پولیو ویکسین پلانے سے منع کیا

ڈاکٹر آفتاب کے بقول پاکستان میں پولیو کے خاتمے میں سب سے بڑی رکاوٹ انکاری والدین ہیں ہم ان والدین کو راضی کرنے کیلئے مختلف طریقوں سے کام لیے رہیں ہے

مذہبی انکاریوں کیلئے ہم علماء سے مدد لیتے ہیں وہ ان کے گھر جارہے ہیں اور اسی طرح غلطی فہمی کے شکار والدین کی خدشات دور کرنے کیلئے ہم علاقے میں عمائدین اور انکاری والدین سے میٹنگز کرتے ہیں جس کے فوائد درآمد ہورہے ہیں اور وقت کیساتھ انکاری والدین میں کمی آرہی ہے.

ڈاکٹر آفتاب کاکڑ نے افغانستان سے لوگوں کی بڑی تعداد میں آمدورفت کو بھی ایک وجہ بتایا

ان کے مطابق افغانستان میں پانچ ملین بچوں کوپولیو ویکسین تک رسائی نہیں ہے کیونکہ وہاں کوئی نظام نہیں ہے جس کی وجہ سے پولیو سے متاثرہ بچوں کی ہمیں اصل تعداد کا نہیں علم نہیں ہے.

عالمی ادارہ صحت کے مطابق افغانستان میں پولیو سے رواں سال انیس بچے متاثر ہوئے ہیں جبکہ پاکستان میں یہ تعداد پینسٹھ تک پہنچ چکی ہے

دوسری طرف نائجیریا بھی ان تین ممالک میں شامل ہے جو پولیو سے زیادہ متاثر ہیں لیکن کہا جارہا ہے ہے کہ نائیجریا نے پولیو کے خاتمے میں کامیاب حاصل کرلی ہے اگر آنے والے تین مہینوں میں نائیجریا سے پولیو کا کوئی کیس رپورٹ نہیں ہوا تو عالمی ادارہ صحت نائیجریا کو پولیو فری ملک قرار دیدیگا

اپنا تبصرہ بھیجیں