وزیراعظم عمران خان کس کیلئے فکر مند

مانیٹرنگ ڈیسک

اسلام آباد میں جمعیت کے زیر اہتمام آزادی مارچ کا دھرنا جاری ہے جسے چھ روز ہوگئے ہیں اور ابھی تک کوئی واضح تصویر نظر نہیں آرہی کہ اونٹ کس کروٹ بیٹھے گا

مولانا فضل الرحمان پرامید ہیں کہ ان کے مطابق پوری ہونگے اور وہ سروخرو ہوکر اس میدان سے باہر جائینگے

حکومتی مذاکراتی کمیٹی اور مولانا فضل الرحمان کے درمیان مذاکرات کے کئی دو ر ہوچکے ہیں تاہم ڈیڈ لاک برقرار ہے

مولانا فضل الرحمان کا مطالبہ ہے کہ وزیراعظم عمران خان استعفیٰ دیں جبکہ حکومتی مذاکراتی کمیٹی کا کہنا ہے کہ حکومت وزیراعظم کے استعفیٰ کے علاوہ دوسرے مطالبات منظور کرسکتی ہے

دوسری جانب دھرنے کے شرکاء کو بارش اور شدید سردی کا سامنا ہے شاید انہیں اندازہ نہیں تھا کہ اسلام آباد میں موسم ان کے موافق نہیں ہوسکتا یا ابر کرم ابر زحمت بن جائیگی

بارش اور سردی کے باعث آزادی مارچ کے شرکاء کنٹینٹرز میں پناہ لینے پر مجبور ہیں

آزادی مارچ کے شرکاء کے پریشانی کے پیش نظر وزیراعظم عمران خان نے سی ڈی اے کے ڈائریکٹر کو ہدایت کی وہ جاکردھرنے والوں کی خیر خبر لیں

وزیراعظم نے ٹوئٹر بیان میں کہا میں نے ہدایت کی ہے کہ موسم کی تبدیلی اور بارش کے بعد دھرنے کے شرکاء کی مشکلات کا جائزہ لیکر ریلیف کیلئے اقدامات کیے جائیں

اب دیکھنا یہ کہ موسم کی سختی اور مطالبات کے منظوری میں تاخیر کے باعث آزادی مارچ کے شرکاء کب تک ٹکے رہتے ہیں

https://pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js

اپنا تبصرہ بھیجیں