بلوچستان گیٹ وے ،ایران کا سی پیک منصوبے کا حصہ بننے میں دلچسپی کااظہار

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

نیوز ڈیسک
پاک ایران سرحد کے مختلف مقامات پر بارڈر پوائنٹس ٹریڈ اور اکنامک زونز کے قیام کے ذریعہ قانونی تجارت کے فروغ کی ضرورت پر زور

پاک ایران مشترکہ بارڈر کمیشن اور جوائنٹ بارڈر ٹریڈ کمیشن میں طے پائے جانے والے معاہدوں پر عملدرآمد کی ضرورت سے بھی اتفاق کیا گیا

منشیات کی سمگلنگ اور دہشت گردی کی روک تھام کے لئے مربوط اقدامات کے آغاز کے ساتھ ساتھ دونوں ممالک کے درمیان تجارتی حجم کو پانچ ارب ڈالر تک پہنچانے کا ہدف حاصل کرنے کاعزم

میر جاوامیں جلد فری اکنامک زون کا افتتاح کیا جارہا ہے

ایران اپنی پٹرولیم مصنوعات پاکستان کو ارزاں نرخ پر دینے میں دلچسپی رکھتاہے جس سے ان مصنوعات کی سمگلنگ کی روک تھام بھی ممکن ہوسکے گی

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان سے ایران کے قونصل جنرل محمد رفیعی کی ملاقات ، دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی، معاشی اور تجارتی روابط کے فروغ کی ضرورت سے اتفاق

ایران پاکستان کے ساتھ اپنے سماجی، سیاسی، ثقافتی، اقتصادی اور معاشی تعلقات کو بہت اہمیت دیتا ہے

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان سے ایران کے قونصل جنرل محمد رفیعی ملاقات کررہے ہیں

جو ایران کی خارجہ پالیسی کا اہم حصہ ہے

دونوں ممالک کے درمیان قانونی تجارت کے فروغ سے عام آدمی کی معاشی حالت بہتر ہوگی اور امن وامان کی صورتحال میں بھی بہتری آئے گی

پاک ایران گیس پائپ لائن گیس کے منصوبے کی تکمیل سے پاکستان توانائی کی اپنی ضروریات بھی پوری کرسکتا ہے

کوئٹہ زاہدان ریلوے ٹریک اور شاہراہ کی بہتری کے ساتھ ساتھ کوئٹہ شہر میں سڑکوں کی تعمیرومرمت اور شہری سہولتوں کی فراہمی کے لئے تعاون کی پیش کش

یہ بھی پڑھیں
1 of 2,968

تجارتی سرگرمیوں کے فروغ کے لئے دونوں ممالک کے درمیان مشترکہ بینکنگ کے نظام کے قیام کی ضرورت پر زور

وزیراعظم کے آئندہ دورہ ایران کے دوران پاکستان اور ایران کے درمیان تجارت کے فروغ سمیت دیگر اہم معاہدے ہوں گے

ایرانی قونصل جنرل نے وزیراعلیٰ کو صوبہ سیستان بلوچستان کے گورنر کی جانب سے ایران کے دورے کی دعوت دیدی

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان
آج کی دنیا میں ممالک کے درمیان بہتر تعلقات معاشی اور اقتصادی بنیادوں پر قائم ہوتے ہیں جن ممالک کے درمیان مضبوط تجارتی روابط ہوتے ہیں ان کے تعلقات بھی مثالی ہوتے ہیں

گذشتہ چند سالوں میں خطے کو درپیش صورتحال کے پاکستان اور ایران پر بھی اثرات مرتب ہوئے ہیں جن کی وجہ سے دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی تعلقات کو وہ استحکام نہیں مل سکا جو ملنا چاہئے تھا

موجودہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کی کوشش ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان معاشی اور اقتصادی تعلقات میں اضافہ ہو،

دونوں ممالک کے درمیان سرحدی امور کی بہتری، سمگلنگ کی روک تھام، امن وامان اور سیکیورٹی کی جانب مثبت پیش قدمی ہورہی ہے

پاکستان اور ایران کی سرحد پر قانونی تجارتی سرگرمیوں میں اضافے کے مثبت اثرات مرتب ہوں گے اور پشین، مند،گپت سمیت آٹھ مقامات پر ٹیکس فری بارڈر مارکیٹوں کا قیام اہم پیشرفت ثابت ہوگا

وزیراعلیٰ نے اس موقع پر زائرین کی آمدورفت کو محفوظ بنانے اور ان کے لئے تفتان میں سہولتوں میں اضافے کے لئے اقدامات کی تفصیلات سے بھی آگاہ کیا

وزیراعلیٰ نے ایران کے دورے کی دعوت قبول کرتے ہوئے کہا کہ وہ جلد متعلقہ حکام کے ہمراہ ایران کا دورہ کریں گے

ملاقات میں پاک ایران سرحد کے مختلف مقامات پر بارڈر پوائنٹس ٹریڈ اور اکنامک زونز کے قیام کے ذریعہ قانونی تجارت کے فروغ کی ضرورت پر زوردیا گیا

ملاقات میں بلوچستان کے راستے پاک ایران تجارتی کاریڈور کے قیام کی تجویز سے بھی اتفاق کیا گیا

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.