اس بات میں کوئی حقیقت نہیں کہ ہمیں کسی نے کہا کہ عدم اعتماد لاؤ: رانا ثنا اللہ

0

مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثنا اللہ کا کہنا ہے کہ تحریک عدم اعتماد کے دوران فوج غیر جانب دار تھی، اسی لیے بانی پی ٹی آئی نے یہ نعرہ لگایا تھا کہ نیوٹرل تو جانور ہوتا ہے۔

 رانا ثنا اللہ نے کہا کہ جنرل باجوہ نے ہم سے یہ کہا تھا کہ تحریک عدم اعتماد واپس لے لیں تو بانی پی ٹی آئی نئے الیکشن کرا دیں گے۔

رانا ثنااللہ نے بتایا کہ اس پیش کش پر سیاسی جماعتوں نے غور کیا تو مولانا فضل الرحمان نے اس کے خلاف زبردست دلائل دیے اور خدا کی قسم یہ کہا کہ بانی پی ٹی آئی یہودی ایجنٹ ہے، یہ ملک تباہ کر دے گا اس کی بات پر اعتبار نہیں کرنا چاہیے۔

سابق وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ فضل الرحمان میرے لیے قابل احترام ہیں مگر انہوں نے اپنے آپ سے زیادتی کی ہے،انہوں نے حقائق کے برعکس بات کی ہے، یہ کیا بات ہوئی کہ جو شخص ریٹائر ہوا سارا ملبہ اس پرڈال دیں۔

رانا ثنا اللہ نے بتایا کہ شہبازشریف کے گھر میں ایک میٹنگ ہوئی تھی جس میں فضل الرحمان بھی شامل تھے، مولانا نے میٹنگ میں کہا کل آرمی چیف نے بلایا تھا کہ آپ عدم اعتماد کی تحریک واپس لیں، مولانا نے کہا کہ آرمی چیف کہتے ہیں بانی پی ٹی آئی الیکشن کا اعلان کردے گا، اس میٹنگ میں پی ڈی ایم کی تمام 13 جماعتوں کے قائدین موجود تھے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت سنبھالنے کے بعد جب ہر چیز سامنے آنے لگی تو ہم نے فیصلہ کیا کہ اسمبلی توڑ دیں گے الیکشن میں جائیں گے، اس میٹنگ میں فضل الرحمان،آصف زرداری موجود تھے اور نوازشریف لندن سے ویڈیو لنک پر تھے، آصف زرداری،فضل الرحمان نے نوازشریف کو قائل کیا کہ حکومت سے استعفیٰ نہیں دینا حکومت چلانی ہے،  اس کے بعد اب مولانا  ایسی باتیں کر رہے ہیں۔

رانا  ثنا اللہ کا کہنا ہے کہ جنرل باجوہ یا جنرل فیض سے میری کوئی ہمدری نہیں، مولانا نے الیکشن نتائج کی فریسٹریشن میں ایسی گفتگو کی ہے جو ان کے منصب کو زیب نہیں دیتی، اب مولانا کہتے ہیں جنرل فیض نہیں کچھ اور اشخاص تھے،بتائیں وہ کون تھے؟

انہوں نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان کی اس بات میں کوئی حقیقت نہیں کہ ہمیں کسی نے کہا کہ عدم اعتماد لاؤ ،مولانا عالم دین ہیں اگر وہ یہ باتیں کر رہےہیں تو انا للہ وانا الیہ راجعون،ان کو چاہیے کہ ان باتوں کو یہی تک رہنے دیں۔

 اس کے علاوہ انہوں نے پی ٹی آئی پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ خیبر پختو نخوا میں یہ لوگ جیتے ہیں تو وہاں الیکشن ٹھیک ہوا ہے، جہاں یہ لوگ ہارے ہیں تو کہتے ہیں الیکشن ٹھیک نہیں ہوا،اگر الیکشن ٹھیک نہیں ہوا تو مستعفی ہو کر نئے الیکشن کا مطالبہ کریں۔

رانا ثنااللہ نے کہا کہ 16ماہ میں جو مہنگائی ہوئی اس سے ہمیں سیاسی نقصان ہوا ہے، ملک کو اس دلدل سے نکالنے کے لیے تیار ہیں اس کا جو بھی نتیجہ نکلے، جو ہونا ہے وہ ہمیں نظر آرہا ہے کچھ ابہام نہیں۔

You might also like
Leave A Reply

Your email address will not be published.