متحدہ اپوزیشن کے جماعتوں سے نیشنل ایجنڈے پر بات ہوسکتی ہے ،نوابزادہ لشکری رئیسانی

0

ویب ڈیسک
سیاست امکانا ت کا نام ہے بلوچستان نیشنل پارٹی آئین

کی بالادستی پارلیمنٹ کی خودمختیاری ، صوبوں کے حقوق کیلئے حکومت اور اپوزیشن دونوں کا ساتھ دیگی

وفاق میں تحریک انصاف کی اتحادی نہیں آزاد بینچوں پر بیٹھ کر پارٹی نے تحریک انصاف کی مشروط حمایت کے بدلے بلوچستان کے حل طلب مسائل سے متعلق 6 نکات پیش کئے ہیں جن پر اب تک قابل ذکر پیش رفت نہیں ہوئی

یہ بھی پڑھیں
1 of 8,717

6 نکات پر عملدرآمد نہ ہونے سے ہم مایوس نہیں سیاست سائنس آف امکانات کا نام ہے جس کو مد نظر رکھتے ہوئے ہم کوشش کررہے ہیں کہ وفاقی حکومت کو پیش کئے 6 نکات پر کہیں نہ کہیں عمل درآمد ہوسکے جس کیلئے گزشتہ روز ہونے والے پارٹی کے مرکزی سینٹرل کمیٹی کے اجلاس میں وفاقی حکومت سے مذاکرات کیلئے ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے

جو آئندہ چند روز میں وفاقی حکومت سے مذاکرات میں ہونے والے پیش رفت سے متعلق اپنی رپورٹ پارٹی قیادت کو پیش کریگی پارٹی کا اصولی موقف ہے کہ بلوچستان سے متعلق وفاقی حکومت کیساتھ ہونے والے معاہدہ پر عملدرآمد ہو ،تا کہ صوبے اور وفاق میں اعتماد کی فضاء قائم ہوسکے

پارلیمنٹ میں ان ہاؤس تبدیلی سے متعلق انہوں نے کہا کہ اپوزیشن کی تمام جماعتیں متحدہوں اور دو بڑی جماعتوں میں موجود عدم اعتماد کی فضاء میں کمی آئے توکہیں نہ کہیں شایدکوئی تبدیلی آسکے ایسے میں بلوچستان نیشنل پارٹی اصولوں کی بنیاد پرکسی کا بھی ساتھ دے سکتی ہے

وفاق میں پارٹی نے تحریک انصاف کی مشروط حمایت کی ہے اپوزیشن جماعتوں کے پاس پاکستان اور صوبوں کیلئے بہتر ایجنڈا ہوا تو یقینا ان کا ساتھ دینگے ۔انہوں نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کو صوبوں کی خودمختیاری ،فعال پارلیمنٹ ملکی کی خارجہ پالیسی میں تبدیلی ، آئین کی بالادستی ، انتظامی امور سے سیاست اور سیاست کو انتظامی امور سے پاک رکھنے اور وفاق کی مضبوطی کیلئے ایک نیشنل ایجنڈے کا تعین کرنا چائیے

بلوچستان نیشنل پارٹی کے مرکزی رہنماء نوابزادہ حاجی میر لشکری خان رئیسانی کا نجی ٹی وی چینل سے گفتگو کے دوران اظہار خیال

You might also like
Leave A Reply

Your email address will not be published.