وزارت داخلہ کوآپریٹو ہاؤسنگ سوسائٹی کے کرپٹ ٹولے کے خلاف درخواستوں پر تحقیقات تاحال مکمل نہ ہو سکیں

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اسلام آباد وزارت داخلہ کوآپریٹو ہاؤسنگ سوسائٹی کے کرپٹ ٹولے کے خلاف ایف آئی اے نے دو الگ الگ درخواستوں پر تحقیقات تاحال مکمل نہیں ہو سکی ہے۔ وزارت داخلہ  کوآپریٹو ہاؤسنگ سوسائٹی  کے بدعنوان ترین سیکرٹری جنرل آفتاب شاہ اور سابق سیکرٹری خزانہ سردار سبیل نے دولت کی چمک کے ذریعے تحقیقات کو رکوا دیا ہے۔ سوسائٹی کے صدر خورشید احمد نے کہا ہے کہ میں ممبران کے حقوق کے لئے جدوجہد کر رہا ہوں لیکن سچ یہ ہے کہ میں ابھی تک اپنے 7 مرلے کے پلاٹ کا قبضہ نہیں لے سکا ہوں۔ تفصیلات کے مطابق وزارت داخلہ  کوآپریٹو ہاؤسنگ سوسائٹی  کے موجودہ سیکرٹری جنرل آفتاب شاہ اور سابق سیکرٹری خزانہ سردار سبیل نے ایف آئی اے پر اثر انداز ہو کر تحقیقات کو بند گلی میں داخل کرا دیا ہے۔ ایف آئی اے میں مقامی زمینداروں اور ایک شہری صغیر احمد چودھری کی طرف سے کرپٹ ٹولے کے خلاف مقدمہ درج کرنے اور بدعنوانی کی تحقیقات کے لئے دو الگ الگ درخواستیں دائر کی گئیں تھیں۔بڈھانہ کلاں کے زمینداروں کی درخواست پر گزشتہ 6 ماہ سے ایف آئی اے کوئی حتمی ایکشن نہیں لے سکی جبکہ شہری صغیر احمد کی درخواست کو بھی ڈیڑہ ماہ ہو چکا ہے لیکن ایف آئی اے ٹس سے مس ہونے کو تیار نہیں۔مصدقہ ذرائع کے مطابق آفتاب شاہ مسلسل ایف آئی اے پر اثرانداز ہو رہا ہے جبکہ سردار سبیل نے بھی تحقیقات کو آگے بڑھنے سے روک رکھا ہے۔ اس حوالے سے سوسائٹی کے صدر خورشید احمد سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے کہاکہ میں نے ایک دفعہ بھی ایف آئی اے پر اثر انداز ہونے کی کوشش نہیں کی اگر میں اتنا ہی بااثر ہوتا تو میں سب سے پہلے اپنے سات مرلے کے مکان کا قبضہ لیتا۔مجھے ابھی تک اپنے پلاٹ کا قبضہ نہیں مل سکا اس لئے یہ الزام بے بنیاد ہے کہ میں ایف آئی اے پر اثر انداز ہوتا ہوں۔

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: