کوہِ باتیل میں گوادر کا تاریخی عید میل

0

سلیمان ہاشم

زندہ قومیں اپنی تہذیب و ثقافت، اجداد کی روایات، اقدار، تمدن اور معاشرت کو زندہ رکھنے کی ہر وقت کوشش کرتی ہیں۔

ہر معاشرہ اپنی مخصوص روایات، تہذیب وتمدن اور ثقافت رکھتا ہے اور کسی بھی معاشرے، خطے، قوم یا ملک کی تہذیب و ثقافت نہ صرف اس کی تاریخ کی ترجمان ہوتی ہے بلکہ یہ اس کے تاریخی طرزِ تعمیر اور معاشرے کی بودوباش کی بھی عکاس ہوتی ہے۔

یقیناً کوئی بھی معاشرہ اپنی تہذیب و ثقافت کے تحفظ کے بغیر اپنی تاریخ سے منسلک نہیں رہ سکتا۔

قدیم ترین تہذیبوں کا ورثہ موجود ہے۔

اس بار کئی سیاسی سماجی مشکلات کے باوجود خیر جان اکیڈیمی اور اس کے روحِ رواں یونس حسین، حاجی قادر جان، ان کی ٹیم کی کوششوں سے آج 18 جون 2024کو گوادر کے نوجوانوں اور دیگر عوام کو ایک بہترین ثقافتی اور روایتی پروگرام دینے میں کامیاب ضرور ہو گئے۔

اس رنگارنگ پروگرام میں ایک اندازے کے مطابق اس بار لوگوں کی وہ تعداد نہیں تھی اس کی وجہ شدید گرمی اور سیکورٹی کی سخت وجہ بیان کیا جا رہا ہے۔

اس بار بھی اس پروگرام کے آرگنائزرز میں ڈاکٹرعبد العزیز کی کمی کو لوگوں نے شدید محسوس کی جو چند ماہ قبل اس دنیا سے رخصت ہو گئے۔

اس بار پہلی دفعہ عید میلہ جو کہ گوادر کی تاریخی پس منظر رکھتا ہے اس پر گوادرکے مکیوں کے مطابق کوہ باتیل پر چڑھنے اور وہاں کے مزے لینے کے لئے سیکورٹی نے چیکنگ میں سست روی کا مظاہرہ کرکے کئی لوگوں کو واپس جانے پر مجبور کیا۔

لیکن جس وقت ہم جا رہے تھے تو سیکورٹی کا معاملہ گوادر کے لوکل پولیس کے حوالے کی گئی تھی اور کافی حد تک لوگوں نے اطمینان کی سانس لی ۔

یہ بھی پڑھیں
1 of 8,759

لیکن عید میلہ آرگنائزر نے تمام مخالفتوں اور تمام مشکلات کے باوجود اس تاریخی لوک ورثہ کو ایک خوبصورت رنگ میں پیش کرکے گوادر اور مکران کے نوجوانوں کو ایک بہترین انٹرٹینمنٹ مہیا کی۔

گوادر کوہِ باتیل پر 18ویں صدی سے گوادرعید میلہ ہر سال دونوں عیدین میں منایا جاتا تھا۔

سلطنت عمان کے دور میں گوادر کے لوگ عید کے دوسرے دن اپنے بچے اور بچیوں کے ساتھ کوہِ باتیل کے مختلف راستوں سے اوپر پیدل، گدھوں، اونٹوں اور گھوڑوں پر چڑھ کر جاتے تھے۔

ہمارے بزرگوں کے مطابق کوہِ باتیل پر گھوڑوں اور اونٹوں کی ریس ہوا کرتی تھی۔

مالد اور دف اور لیوا بجانے والے اپنے فن کا مظاہرہ کرتے تھے۔ گوادر اور اس کے مضافاتی علاقوں کے عام ماہی گیر کسان اور تاجر الصبح کوہِ باتیل پر پہنچ جاتے تھے اور شام ڈھلے واپس گھروں کی جانب لوٹتے تھے۔

کوہِ باتیل پرعارضی ہوٹل اور دکان بھی سجائے جاتے تھے۔ لوگ دوپہر کو وہی کھانا کھاتے تھے

وقت اور حالات تبدیل ہو چکے ہیں۔ اب گوادر کے علاوہ ضلع کیچ پنجگور، لسبیلہ اور کراچی کے سیاحتی شوقین نوجوان بھی کوہِ باتیل کے خوب صورت مناظر سے اور اس میلہ سے مستفید و لطف اندوز ہو رہے ہیں کیوں کہ اب کوہِ باتیل تک پکی اور کچی سڑک بنی ہے۔

پہلے اس پر چڑھنے میں کئی گھنٹے لگتے تھے، اب منٹوں میں لوگ پہنچ جاتے ہیں۔

کوہِ باتیل نہ صرف ایک تفریحی مقام ہے بلکہ یہ جگہ ایک دوسرے سے ملنے ملانے، میل ملاپ، عید مبارک باد پیش کرنے اور ایک دوسرے سے ملاقات کا اہم اور بہترین ذریعہ ثابت ہوئی ہے۔

اس کے علاوہ کئی نوجوان اپنے دوستوں کے ساتھ کوہِ باتیل کے کھیتوں اور کئی شیڈوں میں یا کیکر کے سایہ دار درختوں کے نیچے بیٹھکر وہی کھانا تیار کر کے دوستوں کے ساتھ پکنک کا مزہ لیتے ہیں۔

اور اس بار کافی بارش ہوئی ہے تو پہاڑی پر کئی کڑوں پر پانی کے جوہڑوں میں بچے ڈوبکیاں لیکر نہا رہے تھے اور کئی جگہ پر لوگ پکنک منا رہے تھے۔

You might also like
Leave A Reply

Your email address will not be published.