کوہلو ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال میں ڈاکٹر غیر حاضر مریض رول گئے

ڈپٹی کمشنر کوہلو سے ہسپتال کے ڈاکٹروں کی غیر حاصری کا فوری نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے

0
کوہلو( بلوچستان24ویب ڈیسک ) کوہلو ڈی ایچ کیو میں لاکھوں روپے تنخوائیں لینے والے ڈاکٹروں کی عدم موجودگی ایک سوالیہ نشان ہے تفصیلات کے مطابق بلوچستان کے ضلع کوہلو میں ڈسٹرکٹ ہسپتال میں لاکھوں روپے تنخوائیں اور مراعات لینے والے ڈاکٹروں کی عدم موجودگی ایک سوالیہ نشان ہے کروناوائرس تو کیا ملیریا کا علاج بھی دستیاب نہیں
یاد رہے کہ ڈی ایچ کیو کوہلو میں درجنوں ڈاکٹر تعنیات ہیں مگر رات کے وقت صرف ڈسپنسر کے علاوہ کوئی ڈاکٹر موجود نہیں ھوتا  اور ڈاکٹر صرف ڈیوٹی کے ٹائم پانچ منٹ کے لئے حاضر ہوکر اپنی حاضریاں لگا کر چلے جاتے ہیں اور ایم ایس اسٹاف کو حاضر اور ہسپتال کو فعال کرنے میں ناکام ہوچکے ہیں جس سے  ہر ڈاکٹر ،میڈیکل ٹیکنیشن، نرسنگ اردلی نے اپنا نجی کلینک کھول رکھا ہے اور بجائے سرکاری ہسپتالوں کے ذاتی کلینکوں میں غریب مریضوں سے پیسے بٹور رہے ہیں جبکہ مہنگائے ادوایات کے کمپنیوں سے معاہدوں کے باعث غریب مریض ان کے دوائیاں خریدنے پر مجبور ہیں جس کی وجہ سے ایک جانب غریبوں مریضوں سے پیسے بٹورے جارہے ہیں تو دوسری جانب ہائی میڈیسن کی وجہ سے مریضوں کی صحت خطرے میں پڑ گئے ہیں  مختلف امراض میں بھی تیزی سے اضافہ دیکھنے کو آرہا ہے ڈپٹی کمشنر کی عدم توجہی کی وجہ سے کوہلو کا ڈسٹرکٹ ہسپتال ویرانی کا منظر پیش کررہا ہے جبکہ ایم ایس سمیت دیگر ڈاکٹروں کے ذاتی کلنیوں میں بیٹھنا سمجھ سے بالاتر ہے کوہلو عوامی اور سماجی حلقوں نے وزیر اعلئ بلوچستان, سیکرٹری صحت, صوبائی میر نصیب اللہ, کمشنر سبی,  ڈپٹی کمشنر کوہلو سے ہسپتال کے ڈاکٹروں کی غیر حاصری کا فوری نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے
You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: