بلوچستان یونیورسٹی میں دردناک واقعہ۔۔۔!

ویب رپورٹر 

بلوچستان یونیورسٹی کے واقعہ پر بلوچستان کے تمام سیاسی و مذہبی جماعتوں نے سنجیدگی سے کردار ادا کر نا ہوگا خاموشی گناہ کبیرہ تصور ہو گی واقعہ نے بلوچستان کے شریف معاشرے کو مسخ کرنے کی کوشش ہے

ان خیالات کا اظہار جمعیت علما اسلام ضلع کوئٹہ کے رہنماں حاجی شبیر احمد کرد محمد یوسف وقار شاہوانی حافظ زبیر احمد مولانا حافظ ثناء اللہ عیسیٰ خیل اور مولانا عبد الصمد نے اپنے مشترکہ بیان میں کہا کہ بلوچستان یونیورسٹی میں دردناک واقعہ سے بلوچستان کے طلباء اور طالبات کو تعلیم جیسے زیور سے محروم رکھنے کی سازش ہے

یہ بھی پڑھیں :جامعہ بلوچستان اسکینڈل،وی سی کی عہدے سے دستبرداری بھی معاملے کو ٹھنڈا نہ کرسکی؎

انہوں نے کہا کہ کچھ سازشی عناصر اس واقعہ کے اڑا میں مفادات حاصل کرنا چاہتے ہیں بلوچستان کے تمام سیاستدان دانشور بلوچستان کے سب سے بڑا تعلیمی ادارے بلوچستان یونیورسٹی کے حالات راز پر مل بیٹھ کر سنجیدگی سے غور کیا جائے تاکہ مستقبل میں ہمارے معصوم بچیوں کے عزت و ناموس محفوظ ہو

انہوں نے کہا کہ جمعیت علمائے اسلام اس ناروا عمل پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہیں اور مطالبہ کرتی ہے مخلوط نظام تعلیم کو فی الفور ختم کیا جائے خواتین کے لئے الگ یونیورسٹیوں کا اعلان کیا جائے

انہوں نے مزید کہا کہ اپوزیشن جماعتیں اور حکومت میں شامل جماعتیں خواتین کے لئے الگ یونیورسٹیوں کے قیام کے لئے کردار ادا کر ے جمعیت علما اسلام بلوچستان کے تمام تعلیمی اداروں میں اصلاحات کے خواہاں ہیں۔

https://pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js

اپنا تبصرہ بھیجیں