ایسا المیہ کہ ۔۔۔

(باقی بلوچ)

سچ اور جھوٹ کے درمیان فاصلے مٹ گئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو جھوٹ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جھوٹ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو سچ ہے۔۔۔۔۔۔وہ سچ کہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سچ اور جھوٹ کے مابین ناپ تول پہچان اپنی الگ حیثیت اگر مشکل نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو کم از کم آسان بھی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟۔۔۔۔۔۔۔

سچ اور جھوٹ کے درمیان رسہ کشی اپنی حیثیت منوانا ازل سے ابد تک جاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور رہے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے سماج کا سب سے بڑا المیہ یہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ یہاں المیوں کا نہ کسی کو فکر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ اور نہ ہی ادراک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
ایک بار نہیں بار بار “دھڑا دھڑ” لگا تار، جھوٹوں، چوروں، شاہوں، کٹھ پتلیوں، دْم چھلوں کے سفارش زبانی کلامی جھوٹوں کی حمایت کیاالمیہ نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

جو کرپشن میں پلاٹس کے بندربانٹ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں میں ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ناں میں ناں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں ساتھ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ ساتھ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو ساتھ نہیں وہ غلط ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جھوٹے، لٹیرے، منافق نہ جانے کیا کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟۔۔۔۔

جس کے پاس سب کچھ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اْس کے پاس کچھ بھی

نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جس کے پاس کچھ بھی نہیں اسکے پاس سب کچھ

ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یعنی۔۔۔۔۔۔۔۔۔عقل۔۔۔۔۔۔۔۔

جو جمہوریت کے دعویدار ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدا کی

قدرت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہی جمہوریت سے نالاں ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

کیا یہ جمہوریت ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

ہاں یہ جمہوریت ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بڑی بے شرم جمہوریت ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟

جو ٹیچر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ٹیچر کے آداب سے بھی واقف نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سب سے انجان بے گانہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جو سیاست دان ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ٹھکیدار ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جو ٹھکیدار ہے۔۔۔۔۔۔۔ وہ سیاست دان ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مطلب کوئی خاص فرق نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

اگر استاد۔۔۔۔۔۔۔۔استاد ہے۔۔۔۔۔۔تو شاگرد۔۔۔۔۔۔۔ شاگرد ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

اگر استاد۔۔۔۔۔۔دوست۔۔ ساتھی۔۔۔۔۔۔۔ تو درمیان میں آداب اور تمیز۔۔۔۔۔کہاں۔۔۔۔۔۔۔۔؟

یہاں ہر کوئی سب کچھ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسے۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کسی کو سمجھ نہیں آتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہاں ہر کوئی بیک وقت۔۔۔۔ ادیب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شاعر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دانشور۔۔۔۔۔۔

فکشن رائیٹر۔۔۔۔۔بے حساب ڈگری ہولڈرز۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تجزیہ کاراور نہ جانے کیا۔۔۔ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نہ اسلوب۔۔۔۔۔۔۔نہ جمالیات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہ استعارہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہ تشبیہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نقالی ہی نقالی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے بیٹھک سجانے کا اہتمام ہوتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
اب کچن کی بناوٹ۔۔۔۔۔سجاوٹ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ کوئی اپنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہ اپنائیت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب پرائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سب وقت کی بات ہے۔۔۔۔۔۔

نوٹ: ادارے کا مضمون نگار کے رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں

https://pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js

اپنا تبصرہ بھیجیں