قلعہ عبداللہ ،گلستان کو گیس کی فراہمی ،پشتونخوامیپ سے چڑ ،خان صمد خان شہید کی جیل

0

کوئٹہ ( اسٹاف رپورٹر ) سوئی سدرن گیس کمپنی کی جانب سے ضلع قلعہ عبداللہ کی تحصیل گلستان اور قلعہ عبداللہ میں آبادی کے حوالے سے 2016-17میں ایک سروے کیا گیا جسے فزیبل قرار دینے کے لئے مرکزی حکومت کو برائے منظوری ارسال کیا گیا بعدازاں منظوری کے بعد سال2016-17ء میں ایک ارب سے زائد کی خطیر رقم مختص کرکے باقاعدہ منصوبے پر کام کا آغاز کیا گیا
لیکن گلستان سے ملحق قلعہ عبداللہ کی کثیر آبادی کو گیس فراہم نہیں کی گئی جس کی وجہ سے علاقے کے عوام میں شدید احساس محرومی پائی جاتا ہے ۔ صوبائی حکومت وفاقی حکومت سے رجوع کرے کہ وہ سوئی سدرن گیس کی فراہمی میں کی جانے والی غیر منصفانہ تقسیم کی بابت فوری نوٹس لے کر ضلع قلعہ عبداللہ کی تحصیل گلستان اور قلعہ عبداللہ کو گیس کی سہولت فراہم کرنے کو یقینی بنائے اور ساتھ ہی اس منصوبے کی تفصیلات بھی فراہم کرے تاکہ ضع قلعہ عبداللہ کے عوام میں پائی جانے والی بے چینی اور احساس محرومی کا خاتمہ ممکن ہو،بلوچستان اسمبلی اجلاس میں جے یوآئی کے حاجی محمد نواز کی

جے یو آئی رہنمانوا ز کاکڑ

قرار داد

قرار داد کی موزونیت پر بات کرتے ہوئے حاجی محمد نواز نے کہا کہ 2010-11ء میں تحصیل گلستان اور قلعہ عبداللہ کو گیس کی فرامی کے حوالے سے جو سروے کیا گیا اسی کی بنیاد پر نقشے بھی بنے اور فزیبلٹی رپورٹ بھی تیار ہوئی مگر فنڈز نہ ملنے سے یہ اہم منصوبہ شروع نہیں ہوسکا گیس فراہمی کے اس منصوبے سے کسی ایک گھر یا ایک مخصوص گاؤں کی بجائے پورے علاقے کو مستفید ہونا چاہئے

۔ جے یوآئی کے عبدالواحد صدیقی
” اس منصوبے سے قرب و جوار کی تمام آبادیوں کو مستفید ہونا چاہئے اسے کسی مخصوص علاقے یا گھر تک محدود نہیں ہونا چائے “

صوبائی وزیر سردار عبدالرحمان کھیتران
”قوم پرستوں کے دور حکومت میں جو کچھ ہوا وہ سب کے سامنے ہیں وہ لوگ جو خود کو قوم پرست کہتے ہیں انہوں نے قوم پرستی کا ثبوت دیتے ہوئے ان علاقوں کو گیس سے محروم رکھا جو ان کے مخالفین کے علاقے ہیں

جس پر پشتونخوا میپ کے نصراللہ زیرے نے کہا کہ یہ تقریباً15سو ملین کا پراجیکٹ تھا جس کے تحت مرحلہ وار تمام علاقوں اور آبادیوں کو گیس فراہم کی جائے گی اس موقع پر نصراللہ زیرئے اور سردار عبدالرحمان کھیترا ن کے مابین تلخ جملوں کا بھی تبادلہ ہوا

یہ بھی پڑھیں
1 of 8,730

نصراللہ زیرے کا کہنا تھا کہ وزیر موصوف کو پشتونخوا ملی عوامی پارٹی سے چڑ ہے پشتونخوا میپ عوامی جماعت ہے جس نے عوام کے لئے جدوجہد کی اور خان شہید عبدالصمدخان اچکزئی نے اپنی

کوئٹہ ،بلوچستان اسمبلی اجلاس کے دوران وزیراعلیٰ جام کمال خان سے اراکین صوبائی اسمبلی بشریٰ رند اور لیلی ترین بات چیت کررہی ہیں

زندگی کے 32سال جیل میں گزارے

رکن اسمبلی کا موقف بالکل غلط ہے انہیں کسی جماعت سے چڑ نہیں بلکہ وہ ثبوتوں کی بنیاد پر ذمہ داری کے ساتھ بات کررہے ہیں جس کا فاضل رکن کو برا نہیں منانا چاہئے ،سردار عبدالرحمان کھیتران کا جواب

سردار عبدالرحمان کیھتران نے کہا کہ شہید صمد خان اچکزئی نے 32 نہیں 10 سال جیل میں گزارہے ہیں ۔

صوبائی وزیر انجینئرزمرک خان اچکزئی
” 2008ء میں میں نے اس وقت کے وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کو اس ضمن میں ایک درخواست دی تھی کہ حرمزئی پشین اور یارو کی جانب سے ضلع قلعہ عبداللہ کو آسانی سے گیس فراہم کی جاسکتی ہے جس پریوسف رضا گیلانی نے احکامات بھی دیئے اور اس کے بعد منصوبے کا پی سی ون بھی بنا نقشہ بھی بن گیا تاہم پھر اس منصوبے کے تحت قلعہ عبداللہ کے ساتھ ساتھ تحصیل گلستان کو بھی گیس کی فراہمی کے لئے ابتدائی کام ہوا مگر حکومت ختم ہوگئی اور فنڈز نہیں ملے پچھلے دور حکومت میں اس اہم منصوبے کا نیااسٹیمیٹ بنا کر اس منصوبے کو ایک گاؤں تک محدود کیا گیا ۔

مشیر لائیوسٹاک مٹھاخان کاکڑ نے بھی قرار داد کی حمایت کی اور کہا کہ راستے میں جو بھی آبادیاں آتی ہیں انہیں گیس ملنی چاہئے بعدازاں ایوان نے قرار داد متفقہ طو رپر منظور کرلی ۔

You might also like
Leave A Reply

Your email address will not be published.